خطاء/ شاعری ۔ مدت ہوئی عورت ہوئے

[23] خطاء
khata
میں نے معصوم سمجھنے کی خطاء کی تھی جسے
main ne masoom samajhne ki khata ki thi jise
وہی محبوب میرے پیار کا ِقاتِل نکلا
Wohi mehboob mere pyar ka qatil nikla

پیار کا جس کو کبھی ہم نے سمندر جانا
pyar ka js ko kabhi hum ne samander jana
ارے لوگو وہ سمندر نہیں ساحِل نکلا 
arey logo wo samander nahi sahil nikla

میں نے بھٹکے ہوۓ لوگوں کا مسیحا جانا
mein ne bhatkey hoey logon ka maseeha jana
حق کو جو حق نہیں سمجھا تُو وہ باطِل نکلا
haq ko jo haq nahin samjha tu wo batil nikla

آرزوؤں کے سفر میں کہیں معلوم نہ ہو
aarzoaun k safer mein kahin maloom na ho
راہ سمجھا تھا جسے وہ میری منزِل نکلا
rah samjha tha jise wo meri manzil nikla

دوست نادان تھا جو مجھ کو تباہ کر بیٹھا
dost nadan tha jo mujh ko tabah kr beitha
جانے کس کس سے میرا کرنے تقابل نکلا
jane kis kis se mera kerne taqabul nikla

مجھ کو نادان دوستوں ہی نے برباد کیا
mujh ko nadan dostoon ne hi barbad kia
میں وہیں ہار گیا تُو جو مقابِل نکلا
main wahin har gaya to jo moqabil nikla

ناسمجھ کوئی جو تڑپے تو گلہ ہے کیسا
nasamajh koi jo tarpe to gila hai keisa
عقل والا بھی تڑپتا ہوا بِسمل نکلا
aql wala bhi tarapta howa bismil nikla

کہاں لیجاۓ گا ممّتاز خواہشوں کا سفر
kahan le jaey ga Mumtaz  khahishoon ka safar
خار میں جس کو پھنسا بیٹھی میرا دل نکلا
khaar mein jis ko phansa beytha mera dil nikla  
●●●
کلام:ممتازملک
:مجموعہ کلام
 مدت ہوئی عورت ہوئے 
ء20011:اشاعت
●●●
100% LikesVS
0% Dislikes

اپنا تبصرہ بھیجیں