(24) تہہ در تہہ/ شاعری ۔ مدت ہوئی عورت ہوئے

[24] تہہ در تہہ
TEH DER TEH


آسماں کی وسعتوں میں کہکشاؤں سے پرے
aasman ki wussatoon mein kehkshaoon se pry
دوسری دنیا بھی ہے مجھ سے یہ کوئی کہہ گیا
dosri dunya bhi hai mujh se ye koi keh gia

بس اُسی دنیا کا کرنے کو نظارہ ٹھان لی
bus osi dunya ka kerne ko nazara than li
اور اپنے عزم کی موجوں پہ پھر تو بہہ گیا
aur apney azm ki mojon pe phir tu beh gia

اِک جنوں تھا آدمی کے راز کو میں پا سکوں
ik jonon tha aadmi k raz ko main pa sokon
اُس کی ہستی کھوجنے تو اُسکی تہہ در تہہ گیا
os ki hasti khojne tu oski teh der teh gya

اس نے تیرے واسطےیہ سلسلے پھیلاۓ ہیں
Os ne tere waste ye sisile phelaey hain
کیونکہ تُو فطرت میں رکھا اِک تجسّس سہہ گیا
kiun k to fitrat mein rakha ik tajassus seh gia

زندگی کی شام تھی اور حاصلِ مقصد تھا کیا
zindagi ki sham thi aur hasil e maqsad tha kia
روح پر لیکر تھکن اور جھریوں کی  تہہ گیا
rooh per le kr thaken aur jhuriyon ki  teh gya

مل کے مٹّی خاک میں بینام سی بیرنگ سی
mil k mitti khak mein be naam si be rang si
باعمل لوگوں کا پیچھے نقشِ پا تو رہ گیا
ba amal logon ka piche naqsh e pa to reh gya

ممّتاز بے مقصد سفر گر روح اور اِس جسم کا
Mumtaz  be maqsad sfer ger rooh aur is jism ka
ایک ماٹی کا ہے پُتلا جس پہ پانی بہہ گیا
aik mati ka hai putla jis pe pani beh gya 
●●●
کلام: ممتازملک 
:مجموعہ کلام
 مدت ہوئی عورت ہوئے 
 ء2011:اشاعت 
●●●
100% LikesVS
0% Dislikes

اپنا تبصرہ بھیجیں