(25) چراغ/شاعری۔ مدت ہوئی عورت ہوئے

[25] چراغ
CHARAGH

ہوا کے رخ پہ چراغوں کو تم جلاتے ہو
hawa k rukh pe charaghoon ko tum jalatey ho
بجھے چراغ تو ماتم بھی تم مناتے ہو 
bojhey charagh to matam bhi tum manate ho

سمجھ نہ پاؤں کہ کیوں ماہتاب کےدر پہ
samajh na paon k kiun mahtab k dr pe
تم اپنے ہاتھ سے رکھ کر چراغ آتے ہو 
tum apne hath se rakh kr chragh aatey ho

چراغ رات میں جلتے ہیں روشنی کے لیئے
charagh raat mein jalte hain roshni k liey
جلا کے دن میں خود ہی قدر تم گھٹاتے ہو
jala k din mein khud hi qadr tum ghatate ho

تم اپنی بات کے موقعے کا اِنتظار کرو 
tum apni baat k moqey ka intezar kro
صداۓصحرا اِسے کیوں بھلا بناتے ہو 
sada e sehra ise kiun bhala bnate ho

ہمارے صحن میں اپنےلیئے جگہ کم ہے
hamare sehn mein apne liey jaga kam hai
اُٹھا کے دوسروں کا غم بھی چھوڑ جاتے ہو
otta k dosroon ka gham bhi choorr jate ho

میں اور کیا کروں ممّتاز اب تمہارے لیئے
main aur kia karoon Mumtaz  ab tumhare liey
کہ خامشی سے پیا زہر جب پِلاتے ہو
k khamshi se pia zehr jab pilate ho
●●●
کلام: ممتازملک 
:مجموعہ کلام
مدت ہوئی عورت ہوئے 
اشاعت:2011ء
●●●
100% LikesVS
0% Dislikes

اپنا تبصرہ بھیجیں