(37) حیرت/ شاعری ۔مدت ہوئی عورت ہوئے

[37] حیرت
HEIRAT


ہر بار قدم سوچ کے رکھتی ہوں جہاں میں
hr baar qadam soch k rakhti hoon jahan mein
رفتارِ جہاں مجھ کو پنپنے نہیں دیتی
raftar e jahan mujh ko panapne nahi deti
ہر اشک پہ پہرا ہے ہر آہ پہ قدغن
hr ashq pe pehra hai hr aah pe qadghen
یہ قتل تو کرتی ہے تڑپنے نہیں دیتی
ye qatl to kerti hai tarapne nahi deti
کس طرح اپنی ذات کا حصہ اسے سمجھوں
kis tarah apni zaat ka hissa osey samjhoon
جو آنکھ کو خطرے میں پھڑکنے نہیں دیتی
jo aankh ko khatre mein phrakney nahi deyti
چنگاریوں سے کھیلنے کا شوق پھر اس پر
chingarion se khelne ka shooq phir os pr
اُمید یہ کہ آگ بھڑکنے نہیں دیتی
ommeed ye k aag bharakne nahi deyti
اِنصاف کا پیمانہ جہاں سے وہ خریدیں
insaf ka paimana jahan se wo kharidein
فطرت میری اُس سمت لپکنے نہیں دیتی
fitrat meri os samt lapakne nahi deti
ممّتاز کیسے نیند کی رخصت پہ میں جاؤں
Mumtaz kaise neend ki rukhsat py main jaon
حیرت تو پل کو آنکھ جھپکنے نہیں دیتی
hairat to pal ko aankh 
jhapakne nahi deti
●●●
100% LikesVS
0% Dislikes

اپنا تبصرہ بھیجیں