(41) اثر/ شاعری ۔مدت ہوئی عورت ہوئے

 [41]اثر 
 ASAR

نگاہوں میں تکبر دل میں کینہ پروری ہر دم
nigahoon mein takabbur dl mein keena perwari hr dam
جبھی تو اب دعاؤں میں اثر باقی نہیں رہتا
jabhi to ab doaon mein asar baqi nahi rahta
ضرورت سے زیادہ دیں اگر پانی زمینوں کو
zrorat se ziada dein agar pani zaminon ko
جبھی تو پھر ہرا کوئی شجر باقی نہیں رہتا
jabhi to phir hara koi shajar baqi nahi rahta
جہاں ہو احترامِ آدمیّت ذہن میں زندہ
jahan ho ehtaram e admiyat zehn mein zinda
کہیں شاکی کبھی کوئی بشر باقی نہیں رہتا
kahin shaqi kbhi koi bsher baqi nhi rehta
اندھیروں میں اگر جگنو کو بھی پابند کر ڈالیں
andheiron mein agar jugno ko bhi paband kr dalein
تو راتوں میں تمناۓ سحر باقی نہیں رہتا
to ratoon mein tamannaye sahar baqi nahi rehta
جہاں نقلی جواہر پر سدا تکیہ کیئے   رکھیں
jahan naqli jawaher pr sada takya kiye rakhein
وہاں کوئی کبھی اصلی گوہر باقی نہیں رہتا
wahan koi kabhi asli goher baqi nahi rehta
اگر بے فیض لوگوں کو بھری محفل نوازیں گے
ager be faiz logoon ko bhari mehfil nawazein ge
ہُنرمندوں کا پھر کوئی ہنر باقی نہیں رہتا
huner mandon ka phir koi huner baqi nahi rehta
بھلا ممّتاز بِینا اور نابینا کہاں یکساں 
bhala Mumtaz beena aur nabeena kahan yaksan
اگر جو ہوں چراغِ راہ کُہر باقی نہیں رہتا
agr go hon charagh e rah kuher baqi nahi rehta
●●●
کلام: ممتازملک 
مجموعہ کلام:
مدت ہوئی عورت ہوئے 
اشاعت:2011ء
●●●
100% LikesVS
0% Dislikes

اپنا تبصرہ بھیجیں