(42) احساس/ شاعری ۔ مدت ہوئی عورت ہوئے

(42)    احساس        
EHSAS


کیوں وقت کی رفتار کا احساس نہیں ہے
kiyon waqt ki raftar ka ehsas nahi hai
جس شے کی ضرورت ہے میرے پاس نہیں ہے
js shey ki zaroorat hai mere paas nahi hai
جس تیزی سے پہلو کو بدلتا ہے زمانہ 
js tezi se pehlo ko badalta hai zamana
پیہم کوئی اُمید کوئی آس نہیں ہے
peham koi ummid koi aas nahi hai
درجات کا تفریق کا آتا ہے زمانہ
darjat ka tafriq ka aata hai zamana
بس ایک روایت ہے علم پیاس نہیں ہے
bas eik riwayat hai ilm pyas nahi hai
قدموں میں کسی کے ہوں نچھاور بھلا کیسے
qadmoon mein kisi k hon nichawer bhala keise
پہلے سی کوئی پھولوں میں بُو باس نہیں ہے
pehley si koi pholoon mein bou baas nahi hai
کس کے لئے بیکل ہوں مجھے خود نہیں معلوم
ks k liey bekal hon mujhe khud nahi maloom
کیوں دل کو میرے کوئی خوشی راس نہیں ہے
kiyon dl ko mere kio khushi raas nahi hai
پہلے تو اِرادے بڑے بھرپور تھےمیرے 
pehley to irade bare bherpoor they mere
ویسے ہی مصمّم ہیں کوئی یاس نہیں ہے
wese hi musammam hain koi yaas nahi hai
یہ تو ہے وہی بات کہ ممّتاز تو کہہ دے
ye to hai wohi baat k Mumtaz tu keh de
ہیرا ہے ارے یہ کوئی اِلماس نہیں ہے
heera hai are ye koi ilmas nahi hai
●●●
کلام:ممتازملک۔ پیرس
مجموعہ کلام: 
مدت ہوئی عورت ہوئے 
اشاعت:2011ء
●●●
100% LikesVS
0% Dislikes

اپنا تبصرہ بھیجیں