(44) پل صراط/ شاعری ۔ مدت ہوئی عورت ہوئے

    
  [44] پُل صراط 
PUL SIRAT


سوچوں کا پُل صراط ہے چلنا ضرور ہے
sochoon ka pul sirat hai chalna zoroor hai
چاہوں نہ چاہوں اس سے گزرنا ضرور ہے
chahoon na chahoon is se
guzarna zoroor hai
پلّے نہ میرے کچھ بھی رہے اس پہ یہ عالم
palley na mere kuch na rahe is pe ye aalam
رگ رگ میں اپنے کیسا اُبلتا غرور ہے
rag rag mein apne keisa ubalta ghuroor hai
تسبیح توڑ کر کہا موتی بکھیر کر
tasbeeh torh kr kaha moti bikheir kr
اے جوڑنے والے سبھی تیرا قصور ہے
aye jorne wale sabhi tera qosoor hai
خوش رنگ پرندوں کی طرح سوچ کر تو دیکھ
khush rang prindoon ki tarah sooch kr to deikh
مِٹّی کے گھونسلوں میں بھی کتنا سرور ہے
mitti k ghonsloon mein bhi kitna suroor hai
صنّاعی میں خدا کی ملاوٹ نہ کیجیئے
sannai mein khuda ki milawat na kijiye
اسکی نقل سے  ابھی صدیوں تُو دور ہے
is ki naqal se abhi sadyon tu door hai
ممّتاز شرمسار ہوں میں اپنے آپ سے
Mumtaz sharmsar hoon main apne aap se
ننھا پرندہ مجھ سے زیادہ شُکور ہے
nanha parinda mujh se zyda shukoor hai
●●●
کلام: ممتازملک.پیرس
 مجموعہ کلام:
مدت ہوئی عورت ہوئے 
اشاعت:2011ء
●●● 
100% LikesVS
0% Dislikes

اپنا تبصرہ بھیجیں