(46) خدا جانے/ شاعری ۔ مدت ہوئی عورت ہوئے

  [46] خُدا جانے
KHUDA JANEY


زندگی مختصر سی ہے یارو
zindagi mukhtaser si hai yaro
پھر ملیں نہ ملیں خدا جانے
phir milein na milein khuda
jane
ہیں زمانے ہواؤں کی زد پر
hain zamane hawaon ki zad pr
کیا دکھاۓ گی یہ ہوا جانے
kia dikhae gi ye hawa jane
اپنے ملتے ہیں اجنبی کی طرح
apney miltey hain ajnabi ki tarah
اجنبی کی تو اب بلا جانے
ajnabi ki to ab bala jane
دستکوں پر بہار کی جو کُھلے
dastakoon pr bahar ki jo khule
کب خزاؤں میں در ہو وا جانے
kab khizaon mein dr ho wa jane
جس مسیحا کو دیکھ جیتے تھے
js masiha ko deikh jitey the
کھو گئی ہاتھ سے شفا جانے
kho gai hathsey shifa jane
جتنی رشتوں کی آج وقعت ہے
jitni risjtoon ki aaj wuqqat hai
یہ تو ممّتاز برملا جانے
ye to Mumtaz bermala jane
●●●
کلام:ممتازملک.پیرس 
مجموعہ کلام:
مدت ہوئی عورت ہوئے
 اشاعت: 2011ء
●●●
50% LikesVS
50% Dislikes

اپنا تبصرہ بھیجیں