(48) کاغذ کی کشتی/ شاعری ۔ مدت ہوئی عورت ہوئے


[48]  کاغذ کی کشتی
kaghaz ki kashti


کاغذ کی کشتیوں میں پانی کا سفر ہے یہ
kaghaz ki kashtiyon mein pani ka safar hai ye
مِٹی کے باسیوں کا ویران نگر ہے یہ
mitti k basiyon ka weeran nagar hai yeh
جن لوگوں پہ تکیہ تھا ان سب کے رویّوں میں
jn logoon pe takya tha on sab k rawaiyon mein
طوفان کے آنے سے پہلے کا اثر ہے یہ
tufan k ane se pehle ka asar hai ye
جس کے درودیوار میں چیخیں ہوں مُقیّد
js k dar o deewar mein chikhein hon muqaiyad
کیسے نہ کہوں اُس کو وحشت بھرا گھر ہے یہ
keisey na kahoon os ko wehshat bhara ghar hai ye
لکھا ہے جس نے کھیل کے پتّوں پہ ضرورت
lkha hai js ne kheil k patton pe zururat
شاطِر کھلاڑیوں کا بھرپور ہنر ہے یہ
shatir khilariyon ka bharpoor huner hai ye
سر اپنا ہاتھ اپنے دستار بھی مرضی کی
sar apna hath apne dastar bhi merzi ki
دستار نہیں سانپ کی اِک راہ گزر ہے یہ
dastar nahin sanp ki ik rah guzar hai ye
ممّتاز میرے سامنے کیچڑ بھرا رستہ ہے
Mumtaz mere samne
kicher bhara rsta hai
دامن کی سفیدی پر چھینٹے کا خطر ہے یہ
daman ki safaidi pr chinte ka khatar hai yeh
●●●
کلام:ممتازملک.پیرس 
مجموعہ کلام:
مدت ہوئی عورت ہوئے
 اشاعت: 2011ء
●●●
100% LikesVS
0% Dislikes

اپنا تبصرہ بھیجیں