(53) دوسرا موقع/ شاعری ۔ مدت ہوئی عورت ہوئے



[53] دوسرا موقع
Dosra moqa


کبھی بھی زندگی میں دوسرا موقع نہیں آتا
گزر جاتا ہے جو بھی پل کسی قیمت نہیں آتا
kabhi bhi zindagi mein dosra moqa nahin aata
guzer jata hai jo bhi pal ksi qimat nahi aata
گلِ رنگیں کی بارش ہو یا چاہے رات ہو کالی
سروں کی نذر دے کر بھی کبھی حاصل نہ ہو پاتا
gul e rangeen ki barish ho ya chahey raat ho kali
saroon ki nazr de kr bhi kabhi hasil na ho pata
غنیمت اُسکو جانو جو تمہارے ہاتھ میں ہے اب
کہیں پھر گھومتا پھرتا یہ پل واپس نہیں آتا
ghamimat os ko jano jo tmhare hath mein hai ab
kahin phir ghomta phirta ye pal wapas nahin aata
بڑا نایاب ہے عزت کا پودا اک دفعہ بو کر
اگر برباد ہو جاۓ تو پھر بویا نہیں جاتا
bara nayab hai izzat ka poda ik dafa bo kr
ager berbad ho jaey to phir boya nahin jata
کوئی بھی زخم بھرنے کی دوا تو مل ہی جاتی ہے
جبینِ ماہ سے وہ داغ کا صدمہ نہیں جاتا
koi bhi zakhm bherne ki dwa to mil hi jati hai
jabin e mah se wo dagh ka sadma nahin jata
بڑی لمبی ڈگر ہے اور گِر گِر کر سنبھلنا ہے
وہ بازی ہار جاتا ہے جسے اُٹھنا نہیں آتا
bari lambi dager hai aur gir gir kr sanbhalna hai
wo bazi haar jata hai jise othna nahin aata
چراغِ خانہ بن جانا کہیں ممّتاز بہتر ہے
چرغِ راہ بن کر بھی اگر جلنا نہیں آتا
charagh e khana ban jan kahin Mumtaz behter hai
charagh e rah ban kr bhi ager jalna nahin aata
●●●
کلام: ممتازملک۔پیرس 
مجموعہ کلام:
مدت ہوئی عورت ہوئے 
اشاعت: 2011ء
●●● 


 
100% LikesVS
0% Dislikes

اپنا تبصرہ بھیجیں