(54) کانچ/ شاعری ۔مدت ہوئی عورت ہوئے


[54] کانچ
Kanch


زندگی ہے کانچ پہ چلنے کا کھیل
اِک جگہ ہوتا نہیں جذبوں کا میل
zindagi hai kanch pey chalne ka khel
ik jaga hota nahi jazboon ka mail
سچ کو جانوں اور اس کو فائدے میں چھوڑ دوں
میری فطرت سے نہیں کھاتا یہ میل
sach ko janoon aur os ko faide mein choor doon
meri fitrat se nahin khata ye mail
ہر جگہ انسان حاوی دوسرے پر اسقدر
بھولتا ہے زندگی کو موت نے ڈالی نکیل
hr jaga insan hawi dosre pr is qader
bholta hai zindagi ko maut ne dali nokail
کس قدر ڈرتا ہے تو دنیا کو دینے سے جواب
فکر کر اب اس جگہ کی جس جگہ نکلے گا تیل
ks qader derta hai tu  dunya ko deyne se jawab
fikr kr ab os jaga ki jis jaga nikle ga tail
بے عمل بدکار لوگوں کے لیئے دنیا حسیں
فکرمندوں کے لیئے دنیا ہے جیل
be amal badkar logon k liye dunya haseen
fikr mandon k liye dunya hai jail
ممّتاز بولی بے اصولوں کی بڑی 
سچ کا یوسف کھا گیا دمڑی سے میل
Mumtaz boli be osolon ki bari
sach ka Yuosof kha gaya damri se mail
●●●
کلام: ممتازملک.پیرس 
مجموعہ کلام:
مدت ہوئی عورت ہوئے 
اشاعت:2011ء 
●●●


 
50% LikesVS
50% Dislikes

اپنا تبصرہ بھیجیں