(55) مسکرا کر/ شاعری ۔ مدت ہوئی عورت ہوئے

[55] مسکرا کر
Muskora kr


مسکرا کر ہمیں تم نہ دیکھا کرو
مسکرانے کی قیمت بہت بھر چکے
muskora kr hamein tum na dekha karo
muskorane ki qeemat bohot bher chukey
آپ نے اِک دفعہ کا کیا ذکر کیا
ہم تو تیرے لیئے بارہا مر چکے
aap ne ik dafa ka kia zikr kya
hum to tere liye barha mr chukey
کچھ سلیقہ نہ اِظہار کا دے سکے
کس طرح کہہ دیا رہبری کر چکے
kuch saliqa na izhar ka de sake
ks tara keh dia rehbari kr chukey
کچھ تو تعظیم کا حق ادا کیجیئے
آپ کے دل میں گر کوئی گھر کر چکے
kuch to tazeem ka haq ada kijiye
aap k dil mein ger koi gher kr chuke
یہ زمانہ اسے یاد کرتا رہا
جس کے جیتے اسے بے قدر کر چکے
ye zamana ose yad kerta raha
js k jeete osey beqader ker chokey
میرے جذبوں کو ٹھنڈک ملی اِسقدر
سارے احساس ہی سردتر کر چکے
mere jazbon ko thandak mili isqader
sare ehsas ko serdter kr chukey
مجھ کو رشتوں نے ممّتاز ایسا ڈسا
روح تک اس کا زہر اثر کر چکے 
mujh ko rishton ne Mumtaz aisa dasa
roh tak os ka zehr aser kr chuke
●●●
کلام: ممتازملک.پیرس 
مجموعہ کلام:
مدت ہوئی عورت ہوئے 
اشاعت:2011ء
●●●
100% LikesVS
0% Dislikes

اپنا تبصرہ بھیجیں