(56) سوچ/ شاعری ۔ مدت ہوئی عورت ہوئے

(56) سوچ

مجھے سوچ کے سفر پر کہیں اپنے ساتھ لے چل
جہاں میں چلا سکوں گی دل کی زمیں پہ بھی ہل
mujhey soch k safer pr kahin apne sath le chal
jahan main chala skon gi dl ki zameen  
pe bhi hal
کب سے یہاں پہ بارش نہ برس سکی ہے یارب
دل کی زمین ترسے ہونے کو اب تو جل تھل
kb se yahan peh barish na baras saki hai yarab
dl ki zameen trse hone ko ab to jal thal
کوئى بیج اچھا ڈالوں نئى کونپلیں اُگا لوں
یہ پرانی فصل شاید گودام میں گئ گل
koi beej acha daloon nai konplain oga loon
ye porani fasl shayad godam me in gai gal
ہے یہ کیسی بد نصیبی مجھے کچھ نہیں ملا ہے
نہ تو بھوک کم ہوئی ہے نہ ہی روح کی وہ ہلچل
hai ye kaisi badnsibi mujhey kuch nahin mila hai
na to bhook kam hoi hai na hi rooh ki wo halchal
میری بات سن رہے ہو کیا اِسے سمجھ رہے ہو
وہ جو سوچتے نہیں ہیں مجھے کہہ رہے ہیں پاگل
meri baat sun rahe ho kia isey samajh rahy ho
wo jo sochte nahin hain mojhe keh rahe hain pagal
میں فلک پہ ہاتھ ڈالوں تو یہ توڑ لاؤں تارے
مگر مشکلات کا یہ تو نہیں ہے کوئی بھی حل
main falak pe hath daloon to ye toorh laon tare
mger mushkilat ka ye to nahi hai koi bhi hal
نہ سُکون اِس جہاں میں نہ سُکون اُس جہاں میں
ممّتاز دے نہ پاؤں کوئی اِمتحاں مکمل
na sokoon is jahan mein na sokoon os jahan main
Mumtaz de na paon koi imtihan 
mokmmal 
●●●
کلام: ممتازملک.پیرس 
مجموعہ کلام:
مدت ہوئی عورت ہوئے
 اشاعت:2011ء
●●●
100% LikesVS
0% Dislikes

اپنا تبصرہ بھیجیں