(57) خیال / شاعری ۔ مدت ہوئی عورت ہوئے


[57] خیال
khayal


اے میرے دل آج چلتے ہیں وہیں
ہوں صدائیں قُمریوں کی دلنشیں 
aye mere dl aj chalte hain wahin
hoon sadaein qumriyon ki dl nashin
کوئی ہم کو نہ پریشاں کر سکے 
غم جہاں پر ہو نہیں پردہ نشیں
koi hum ko na parisha kr sakey
gham jahan pr ho nahin prda nashin
پُرسُکوں ہوں ہر طرف خاموشیاں
ساعتیں ہوں بس حیات آفریں
pursokoon hoon hr taraf khamoshiyan
saatein hoon bus hayat e aafreen
گُل سے بلبل جب کریں اٹھکیلیاں
نہ ہوس گیری ہو اور نہ بے یقیں
gul se bulbul jab karein athkeiliyan
na hawas geri ho aur na be yaqeen
پھول سے کر دیں جدا کانٹوں کا غم
کوئی اندیشہ چُبھن کا ہو نہیں 
phool se kr dein juda kantoon ka gham
koi andeisha chubhan ka ho nahin
کس قدر ممّتاز دلکش ہے خیال 
بادلوں پہ چل رہی ہوں میں کہیں
ki
s qader Mumtaz dlkash hai khayal
badloon pe chal rahi hoon main
●●●
کلام:ممتازملک.پیرس 
مجموعہ کلام:
مدت ہوئی عورت ہوئے
 اشاعت:2011ء
●●●
100% LikesVS
0% Dislikes

اپنا تبصرہ بھیجیں