(58) آخرت کی کھیتی/ شاعری ۔ مدت ہوئی عورت ہوئے


[58] آخرت کی کھیتی
Akhrat ki khaiti



فصل کٹتی دیکھ کر میں سوچتا ہی رہ گیا
دنیا اِک کھیتی ہے میں نے اِس میں کیا کیا بو دیا
fasl kuteti deikh kr main sochta hi reh gaya
dunya ik kheiti hai main ne is main kia kia bo dia 
کل کٹے گی یہ فصل تو کیا مجھے ہو گی ہضم
یہ بنا سوچے ہی جانے میں تو کیا کیا بو گیا
kal kate gi ye fasal to kia mujhey ho gi hazam
ye bina soche hi jane main to kia kia bo gia
یا اِلہی کیا کروں میں ہاتھ ملنے کے سوا
وقت کی مہلت ہے تھوڑی اور پھر لمبی سزا
ya ilahi kia karoon main hath malne k siwa
waqt ki mohlat hai thori aur phir lambi saza
تُو جو مجھ کو نہ بچانا چاہے گا اے مہرباں
میں تو خود برباد اپنے ہاتھ سے ہی ہو لیا
tu jo mujh ko na bachana chahai ga aey meherban
main to khud berbad apne hath se hi ho gaya
سنگتوں مِیں میں نے شیطانوں کے دنیا ہار دی
اور اپنی آخرت بھی ہارنے کو میں چلا
sangaton mein main neyn shaitanon k dunya haar di
aur apni akhrat bhi harne ko main chala
آگ کا طوفان ہے اور میں بڑا کمزور ہوں
آگ کو گلزار کرنے کی تو بس تیری عطا
aag ka tufan hai aur main bara kamzor hoon
aag ko gulzar kerne ki to bus teri ata
پیاس کی شدّت تو چند لمحے بھی سہہ نہ پاؤں میں
اب زبانیں باہر آئیں پیاس سے ہم کو بچا
piyas ki shiddat to chand lamhe bhi seh na paon main
ab zabanein baher aein piyas se hum ko bacha
یا اِلہی مجھ سے جو کوتاہیاں اب ہو چُکیں
کوتاہیوں کو دور کرنے کا عطا کر حوصلہ
ya ilahi mujh se jo kotahian ab ho chokin
kotahiyon ko door kerne ka ata kr hosla
ذہن کی دھرتی کو میری اِسقدر زرخیز کر
ممّتاز نیکی بو سکوں اور اپنا دامن لُوں بچا
zehn ki dharti ko meri is qader zerkheiz kr
Mumtaz naiki bo sakoon aur apna daman loon bacha 
●●●
کلام: ممتازملک.پیرس 
مجموعہ کلام:
مدت ہوئی عورت ہوئے
 اشاعت:2011ء
●●●


100% LikesVS
0% Dislikes

اپنا تبصرہ بھیجیں