(59) راستے/ شاعری ۔ مدت ہوئی عورت ہوئے

 
(59) راستے 
Raste 


حالات کے طوفان میں بچنے کے واسطے
ہم نے تو اپنے ہاتھ ہی پتوار کر لیئے
halat k tufan mein bachne k waste
hum ne to apne hath hi patwar kr liey
جس کی ہمیں کبھی بھی ضرورت نہیں رہی
ایسے بھی ہم نے راستے ہموار کر لیئے
js ki hamein kbhi bhi zarurat nahin rahi
aisey bhi hum ne raste humwar kr liey
قدرت کو اپنے مدِمقابل سمجھتے ہی
سارے  معاملے یہاں خود کار کر لیئے
qudrat ko apne madd e muqabil samajhte hi
sare moamle yahan khudkar kr liey
جن کشتیوں نے پار لگانا تھا دوستو
کرکےسوراخ اُن کو ہی بیکار کر لۓ
jin kashtioyon ne paar lagana tha dosto
kr k sorakh on ko hi beykar ker liey
خوشبو چرائی رنگ گلوں سے نچوڑ کر
ہم نے تو پھول شاخ پہ لاچار کر لیئے
khushboo churai rang goloon se nichorh kr
hum ne to phool shakh pe lachar kr liey
ہر بات اپنے اندر رکھتی ہے مرحلے
یہ مرحلے ہمیں نے تو دشوار کر لیئے
hr baat apne ander rakhti hai marhale
ye marhale hamin ne to dushwar kr liey
پہلے تصوراتی سے قصّے یقین تھے
پر آج تو یقیں سے بھی اِنکار کر لیئے
pehle tasaworati se qissey yaqeen they
per aj to yaqeen se bhi inkar kr liey
ممّتاز خوش نصیب تھے وہ لوگ کس قدر
شعلے بھی جن کے واسطے گلزار کر لیئے
Mumtaz khush naseeb they wo loog ks qader
sholey bhi jn k waste gulzar kr liey
●●●
کلام: ممتازملک.پیرس 
مجموعہ کلام:
مدت ہوئی عورت ہوئے
 اشاعت:2011ء
●●●


100% LikesVS
0% Dislikes

اپنا تبصرہ بھیجیں