(64) ماضی/ شاعری ۔مدت ہوئی عورت ہوئے


[64] ماضی
Mazi

اپنے گھر کا کچّا آنگن ہمیں بہت یاد آتا ہے
بارش بعد کی سوندھی خوشبو سوچوں کو دے جاتا ہے
apne ghar ka kachcha aangen hamein bohot yad ata hai
barish bad ki sondhi khoshbo sochon ko de jata hai
ہنستے بستے روشن چہرے پیاروں کے جب دِکھتے ہیں
دکھ سہنے کی طاقت کو کچھ اور جواں کر جاتا ہے
haste baste roshan chehre peyaron k jb dikhte hain
dokh sehne ki taqat ko kuch aur jawan kr jata hai
سوچتی آنکھوں کو خوابوں کا تحفہ دیکر جھٹکے سے
اُمیدوں کے پنکھ لگا کر دُور کہیں اُڑ جاتا ہے
sochti aankhon ko khabon ka tohfa de k
r jhatke se
ommidon k pankh laga kr dor kahin orh jata hai
اس نگری میں جہاں ملن ہے نہیں جدائی کوئی
پینگوں پر رنگین سا جوبن آنچل کو لہراتا ہے
is nagri mein jahan milan hai nahin judai koi
peengon pr rangeen sa joban aanchal ko lehrata hai
دھیرے دھیرے کان کے پاس ٹہر کے وہ سرگوشی سے
مجھ کو دنیا بھر کا لمحہ لمحہ حال سناتا ہے
dhirey dhirey kan k pas theher k wo sergoshi se
mujh ko dunya bher ka lamha lamha haal sonata hai
کل کی محرومی کو دیکھوں آج کی آسائش کو جانچوں
زہن میں آتے ہی تجزیہ بھک سے عشق اُڑ جاتا ہے
kal ki mehromi ko dekhon aaj ki asaish ko janchon
zehn mein atey hi tajzia bhak se ishq orh jata hai
ماضی تو ماضی ہوتا ہے حال نہیں وہ بنتا چھوڑو
کون بھلا اِس دور میں گزرے ماضی کو اپناتا ہے
mazi to mazi hota hai hal nahin wo banta chorho
kon bhala is daur mein guzrey mazi ko apnata hai
کیچڑ لتھڑے ہاتھ ہوں چاہے غربت کی سوغات ہو چاہے
سچ ہے یہ ممّتاز کہ ماضی ہر اِک دل کو بھاتا ہے
kicharh lathrhe hath hon chahe ghurbat ki soghat ho chahe
sach hai ye Mumtaz k mazi hr ik dil ko bhata hai 
●●●
کلام: ممتازملک.پیرس 
مجموعہ کلام:
مدت ہوئی عورت ہوئے 
اشاعت:2011ء
●●●
50% LikesVS
50% Dislikes

اپنا تبصرہ بھیجیں