(65) رخصتی p.1/شاعری ۔ مدت ہوئی عورت ہوئے


(65) رخصتی (حصہ 1)
میری لاڈو میری گڑیا!
meri gorhya meri lado


تُو پہلی بار میری گود میں جس روز آئی تھی
مجھے ایسا لگا یہ زندگی بھی مسکرائ تھی
tu meri goode mein js roz ai thi
mujhe aisa laga ye zindagi bhi moskurai thi 
تیرے ننھے سے ہاتھوں نےمیری انگلی جو پکڑی تھی
تیری معصومیّت پہ دل کی دھڑکن گنگنائی تھی
tere nanhe se hathon ne meri ongli jo pakrhi thi
teri masomiat pe dl ki dharhkan gungunai thi
تیرے بابا نے تجھ کو گود میں لے پیار سے چوما
تیرے ہی گرد اُنکی سوچ کا پہیہ سدا گھوما
tere baba ne tujh ko gode mein le pyar se choma
tere hi gird on ki soch ka payya sada ghoma
تجھے ماں گود میں لےکر سناتی تھی کہانی جب
تُو ہی اسکو نظر آتی تھی پریوں کی بھی رانی تب
tujhe maan gode mein le kr sonati thi khani jab
tu hi os ko nazer ati thi peryon ki bhi rani tab
تجھے کانٹا جو چبھتا درد میرے دل کو ہوتا تھا
اُداسی تیرے چہرے پر تو میرا دل بھی روتا تھا
tujhe kanta jo chobhta drd mere dl ko hota tha
odasi tere chehre ki to mera dl bhi rota tha
کبھی راتوں کو بابا لے کے ہاتھوں میں گھماتے تھے
کبھی ہم دونوں تجھ کو بانہوں کا جھولا جھلاتے تھے
kabhi raton ko baba le k hathon mein ghomate the
kabhi hum donon tujh ko banhon ka jhola jholate  the 
تیری مسکان پر بہنوں نے کتنے لاڈ برساۓ
تیرے بھائیوں نے تجھ کو پیار کے انداز دکھلاۓ
teri moskan pr behnon ne kitne lad bersae
tere bhaiyon ne tujh ko pyar k andaz dikhlaye
کمی کوئی بھی تیری پرورش میں ہم نے نہ چھوڑی
جہاں تک ہو سکا تیری کوئی بھی بات نہ موڑی
kami koi bhi teri perwarish mein hum ne na chorhi
jahan tak ho saka teri koi bhi bat na morhi
تجھے اِس پرورش کی آگے جا کر لاج رکھنی ہے
تجھے ماں باپ کے ناموں کی اب معراج رکھنی ہے
tujhey is perwarish ki agey ja kr laj rakhni hai
tujhey man bap ke namon ki ab meraj rakhni hai 
●●●
کلام: ممتازملک.پیرس 
مجموعہ کلام:
مدت ہوئی عورت ہوئے 
اشاعت:2011ء
●●●
50% LikesVS
50% Dislikes

اپنا تبصرہ بھیجیں