(66) رخصتی p.2/ شاعری ۔ مدت ہوئی عورت ہوئے

(66)
رخصتی (حصہ دوم)
Rukhsati p.2

ہر اِک ماں وقتِ رخصت
اپنی بیٹی کو کلیجے سے لگا کر 
hr ik maan waqt e rukhsat 
apni beti ko kaleijey se laga kr
اِک نصیحت اب بھی کرتی ہے
مجتمع کر دھڑکنوں کو آنکھ سے آنسو گرا کر 
کہ
ik naseehat ab bhi kerti hai
mujtama kr dharhkanon ko 
ankh se anso gira kr 
k
تسلّی رکھ یہ آغازِ سفر ہے
مکمل اسکو کرنا اِک ہنر ہے
tasalli rakh ye aghaz e safer hai
mokammal is ko kerna ik huner hai
تُو جس کے ساتھ منزل کو رواں ہے
وہی محبوب بھی ہے چارہ گر ہے
tu js k sath manzil ko rawan hai
wohi mehbob bhi hai chara gr hai
جو تھاما ہاتھ ہے وہ تھامے رکھنا
محبّت کا ہی لہجہ پُر اثر ہے
jo thama hath hai wo thame rakhna
mohabbat ka hi lehja pur aser hai
گلے شکوے کبھی دل میں نہ رکھنا
ہمیشہ بیٹھ کر تم بات کرنا
gile shikwey kabhi dl mein na rakhna
hameysha baith kr tum bat kerna
کبھی مشکل پڑے تو یاد رکھنا
گنوانا نہ کبھی ہمّت کا گہنا
kabhi mushkil parhe to yad rakhn
ganwana na kabhi himmat ka gehna
کبھی آنسو بھری آنکھوں سے جانا
نہ بابا کو کبھی تم درد دینا
kabhi aanso bhari ankhon se jana
na baba ko kabhi tum dard dena
نہ ماما کا کبھی تڑپے کلیجہ
نہ بھائی کو کبھی تم فکر دینا
na mama ka kabhi tarhpe kaleija
na bhai ko kabhi tum fikr dena
کیا اچھے کے سنگ تو نے گزارہ
تو تم نے کیا بھلا ہے تیر مارا
kia achchey k sang tu ne guzara
to tum ne kia bhala hai teer mara
مزا تب ہے برے کو جیت لو تم
بھنور میں ڈھونڈ لو تم اِک کنارہ
maza tab hai borey ko jeet lo tum
bhanwer mein dhondh lo tum ik kinara
تیرا انداز اتنا دلنشیں ہو
کہ دکھ خود چھوڑ جائیں در تمہارا
tera andaz itna dil nashin ho
k dukh khud chorh jaein der tumhara
تمہیں بننا ہے اِک دوجے کی آنکھیں
تو پھر دیکھو گے اِک دلکش نظارہ
tumhein banna hai ik doje ki ankhein
to phir deikho ge ik dilkash nazara
یہ دنیا پھولوں کا بستر نہیں ہے
بناؤ اسکو تم پھولوں کا بستر
ye dunya pholon ka bister nahin hai
banao is ko tum pholon ka bister
سجاؤ اسکو تم پاکیزگی سے
بچھاؤ اس پہ ست رنگوں کی چادر
sajao is ko tum pakizgi se
bichao is pe sat rangon 
ki chader


میری بیٹی پرایا گھر تجھے اپنا بنانا ہے
تجھے سسرال میں میکے کی عزّت بنکے جانا ہے
meri beiti praya ghar tujhe apna banana hai
tujhe susral mein myke ki izzat bn k jana hai
یہ ہے اِک مرد جو اس 
سلطنت
 کا بادشاہ ٹہرا
تجھے بن کر وزیر اس سلطنت کو اب چلانا ہے
ye hai ik mard jo is saltanat ka badsha tehra
tujhe bn kr wazir is saltanat ko ab chalana hai
تجھے ہر منسلک رشتے سے سچا پیار کرنا ہے
کیا وعدہ وفا کا ہے تجھے وعدہ نبھانا ہے
tujhe hr monsalik rishte se sacha pyar kerna hai
kia wada wafa ka hai tujhy wada nibhana hai
تجھے جھگڑوں کو اپنی زندگی سے دُور رکھنا ہے
تجھے خوشیوں کواپنے گھر کا اب رستہ دکھانا ہے
tujhe jhagron ko apni zindagi se dor rakhna hai
tujhy khushyon ko apne gher ka ab rasta dikhna hai
کسی ماں نے بھلا  یہ سب لفظوں میں کہا ہے کب
مگر سینے سے لگ کر اس کی دھڑکن نے بتانا ہے
kisi man ne  bhla ye sab lafzon mein kaha hai kab
mager seene se lag kr os ki dharken ne batana hai
کہ اپنی لاج ہم ہاتھوں میں تیرے سونپے جاتے ہیں
تجھے یہ لاج رکھنی ہے تجھے گھر کو بسانا ہے
k apni laaj hum hathon mein tere sonpe jate hain
tujhe yeh laaj rakhni hai tujhe gher ko basana hai
تجھے قرآن کے ساۓ میں اب اِس گھر سے جانا ہے
تجھے اُس گھر کو جا کر اُس کو اپنا گھر بنانا ہے
tujhe Quran k saye mein ab is gher se jana hai
tujhe os gher ko ja kr os ko apna ghar banana hai
●●●
کلام: ممتازملک.پیرس 
مجموعہ کلام:
مدت ہوئی عورت ہوئے
 اشاعت:2011ء
●●●
100% LikesVS
0% Dislikes

اپنا تبصرہ بھیجیں