(67) سینہ فگار/ شاعری ۔ مدت ہوئی عورت ہوئے


(67) سینہ فگار
Seena figar

جس شخص میں بھی جھانکیئے قصے ہزار ہیں
دل کے جلے ہیں باتیں مگر پُر بہار ہیں
js shakhs mein bhi jhankiye qisse hazar hain
dl k jaly hain batein mager purbahar hain
کانٹوں کی فوج نے ہے چاروں طرف سے گھیرا
کہنے کو باغ میں گل یوں بے شمار ہیں
kantoon ki fouj ne hai charoon taraf se gheira
kehne ko bagh mein gul yon be shumar hain
ہم سا بھی بد نصیب کوئی اور ہو گا کیا
بانٹیں قرار اوروں کو خود بے قرار ہیں
hum sa bhi badnaseeb koi aur ho ga kia
bantein qarar auroon ko khud beyqarar hin
کیوں دوسروں کی طرح سے میں سوچتی نہیں
کیوں اپنی خواہشات کے خود سے مزار ہیں
kiyon dosroon ki terha se main soochti nahi
kiyon apni khahishat ka khud se mazar hain
لے کر نمک پکارتے ہیں وہ گلی گلی
ہے کوئی زخم کیا کوئی سینہ فگار ہیں
ley kr namak pukarte hain wo gali gali
hai koi zakhm kia koi seena figar hain
چارہ گروں کی بستیاں ویران کر گئے
کل کے گداگر آج بڑے باوقار ہیں
chara garoon ki bastiyan wiran kr gaye
kal k gadager aaj bare bawaqar hain
راتوں کی نیند ہم کو غموں سے چھڑا گئی
دن کے عذاب کم ہیں گلے کا جو ہار ہیں
ratoon ki neend hum ko ghamoon se chora gai
din k azab kam hain gale ka jo haar hain
ممّتاز اُس طرف سے ہی پتھر ہمیں لگے
جن کے لیئے سنا تھا کہ یاروں کے یار ہیں
Mumtaz os taraf se hi 
pather hamein lage
jn k liye suna tha k yaroon k yar hain
●●●
کلام: ممتازملک.پیرس 
مجموعہ کلام:
مدت ہوئی عورت ہوئے
 اشاعت:2011ء
●●●


 
100% LikesVS
0% Dislikes

اپنا تبصرہ بھیجیں