(68)پوچھوں خدا سے کسطرح/ شاعری ۔ مدت ہوئی عورت ہوئے


(68) 
پوچھوں خدا سے کس طرح
Pochon khuda se kis 
tarah 

خدایا کس زمانے میں مجھے پیدا کیا تو نے
جہاں مائیں بھی ماؤں سے نظر آئیں جدا یکسر
khudaya ks zamane mein
mujhe paida kia tu ne
jahan maein bhi maon se nazer aein juda yakser
کسی نے باندہ کے بم اپنے بچوں کو دعا دی ہے
کسی نے اپنے بچوں کو بنا ڈالا ہے اِک برگر
kisi ne bandh k bum apne bachchon ko dua di hai
ksi ne apne bachchon ko bana dala hai ik berger
خدایا کس زمانے میں مجھے اب سر اُٹھانا ہے
مجھے خود سے نمک اپنے ہی زخموں پر لگانا ہے
khudaya ks zamane mein mujhey ab sr uthana hai
mujhey khud se nmak apne hi zakhmon pr lagana hai
کوئی اُونچے پہاڑوں پر وطن پر جان دیتے ہیں
کسی نے آج برپا کی قیامت ہر جگہ گھر گھر
koi onchey paharhon pr watan pr jan dete hain
kisi ne aaj berpa ki qyamat hr jaga gher gher
خدایا کس زمانے میں مجھے اب سانس لینا ہے
جہاں پر سانس کا مجھ کو بڑا اِک دام دینا ہے
khudaya ks zamane mein mujhey ab sans lena hai
jahan pr sans ka mujh ko bara ik dam deyna hain 


جہاں پر اب گلابوں کی مہک بارود میں ڈوبی
جہاں پر عیب بن جاتے ہیں اب اِنسان کی خوبی
jahan pr ab gulabon ki mehek barood mein dubi
jahan pr aib ban jate hain ab insan ki khubi
جہاں پر ہم کو رشتوں کا بڑا تاوان بھرنا ہے
مجھے بس دوسروں کی خواہشوں پر آج مرنا ہے
jahan pr hum ko rishton ka bara tawan bherna hai
mujhey bus dosron ki khahishon pr aaj merna hai
یہاں جگنو پکڑ کر اُن کو آگے بیچ دیتے ہیں
یہاں سچ بولنے والوں کی سانسیں کھینچ دیتے ہیں
yahan jugno pkerh kr on ko agey beich deitey hain
yhan such bolne walon ki sansein kheinch leyte  hain
خدایا کس طرح میں اپنے دل کو آج سمجھاؤں
خدایا عقل کو میں اور کیا تاویل دے پاؤں
khudaya ks tarah main apne dl ko aaj samjhaon
khudaya aql ko main aur kia taweel de paon
قیامت کی گھڑی ہو گی قیامت کا سماں ہو گا
کہ جب تو جھوٹ بولے گا تو سچ کا سا گماں ہو گا
qyamat ki gharhi ho gi qayamat ka saman ho ga
k jab tu jhoth boly ga to such ka sa goman ho ga

میری سچائی بوڑھوں کی طرح ڈھونڈے سہارے اور
تمہارا جھوٹ میرے سامنے ہنستا جواں ہو گا
meri sachai borhon ki tarah dhondhe sahare aur
tumhara jhoth mere samne hansta jawan ho ga
خدا سے کس طرح پوچھوں کہ میرا سچ کہاں ھو گا
یہ میری جاں کہاں ہو گی یہ میرا دل کہاں ھو گا
khuda se ks tarah pochon k mera sach kahan ho ga
ye meri jan kahan ho gi ye
mera dl kahan ho ga
●●●
کلام:ممتازملک.پیرس 
مجموعہ کلام:
مدت ہوئی عورت ہوئے
 اشاعت: 2011ء
●●●
50% LikesVS
50% Dislikes

اپنا تبصرہ بھیجیں