(69) بےعقل دہقان/ شاعری ۔ مدت ہوئی عورت ہوئے

(69) بےعقل دہقان
Be aqal dehkan

دائرے محدود ہوتے جا رہے ہیں 
راستے مسدود ہوتے جا رہے ہیں 
daire mehdod hote ja rahe hain
raste masdod hote ja rahe hain
ہو گیا رخصت ہماری زندگی سے اعتدال
ابتداء میں اِنتہا بھی ہم تو کھوتے جا رہے ہیں
ho gaya rukhsat hamari zindgi se etedal
ibtida main intiha bhi hum to khote
 ja rahe hain
اب رویّوں میں وہ پہلے جیسی سرگرمی نہیں
جاگنے کے شوق میں ہم جیسے سوتے جارہے ہیں
ab rawayyon mein wo pehle jeisi sergermi nahin
jagne k shoq mein hum jeise sote ja rahe hain
عقل مندی کی فصل کا اب کوئی اِمکاں نہیں
بے عقل دہقان کیسا بیج بوتے جا رہے ہیں
aql mandi ki fasal ka ab koi imkan nahin
be aqal dehqan keisa beej bote ja rahe hain
یااِلہی اب دعا کا وقت نہ جاۓ گزر
ہم دعاؤں پر ہی سارے دن یہ ڈھوتے جا رہے ہیں
ya ilahi ab doa ka waqt na jaye guzer
hum doaon pr hi sare din ye dhote ja rahe hain
بھول کر ان بےقراروں کی سبھی قربانیاں
اِک گدائی ہل میں مثلِ بیل جوتے جا رہے ہیں
bhol kr on be qararon ki sabhi qurbanian
ik gadai hal mein misl e bail jote ja rahe hain
آس کیوں گھٹتی نہیں یہ رات کیوں کٹتی نہیں
دن میں بھی اب رات سے سپنے سنجوتے جا رہے ہیں
aas kiyon ghathti nahin ye rat kiyon kathti nahin
din mein bhi ab rat sy sapne sanjote ja rahe hain
ہم نے تو وہ پوچھنے والے بھی اب چھوڑے نہیں
زندگی کی ڈور میں جو دکھ پروتے جا رہے ہیں
hum ne to wo pochne wale bhi ab chorhe nahin
zindagi ki door mein jo dukh pirote ja rahe hain
مضطرب آنکھوں سے اب مّمتاز یہ پوچھے گا کون
کیوں اشک گرتے جا رہے ہیں آپ روتے جا رہے ہیں
moztarib aankhon sy ab Mumtaz ye poche ga koon
kiyon ashq girte ja rahe hain ap rote ja rahe hain 
●●●
کلام: ممتازملک.پیرس 
مجموعہ کلام:
مدت ہوئی عورت ہوئے
 اشاعت:2011ء
●●●
100% LikesVS
0% Dislikes

اپنا تبصرہ بھیجیں