(70) شریک غم/ شاعری ۔ مدت ہوئی عورت ہوئے


(70)
شریکِ غم
shareek e gham


شریکِ زندگی تو ہو شریکِ غم نہیں ہوتے 
ہر اک کی زندگی میں کیا یہ زیروبم نہیں ہوتے
shareek e zindagi to ho shareek e gham nahin hoty 
hr ik ki zindagi mein kia ye ranj o gham nahin hote
میں سالوں کی مسافت میں تھکن سے چور ہو لیکن
نہ منزل پاس آتی ہے یہ رستے کم نہیں ہوتے
main saloon ki mosafat mein thakan se choor hon leikin
na manzil pas aati hai ye raste kam nahin hote
یہ دونوں وقت تو ملتے ہیں چند خاموش گھڑیوں میں
مگر سچ یہ ہے شام اور صبح سدا باہم نہیں ہوتے
ye donon waqt to milty hain chand khamosh ghrhyon mein
mager sach hai sham aur subh kabhi bahum nahin hote 
اگر دوچار دکھ اس زندگی سے ہم جدا کر دیں
تو شاید پھر ہمیں دنیا کے فکروغم نہیں ہوتے
ager do char dukh is zindagi se hum juda kr dein
to shayad phir hamein dunya ke ranj o gham nahin hote
مگر کچھ تقویّت اس زندگی کو غم بھی دیتے ہیں
یہ اُٹھی گردنیں ورنہ یہ لہجے خم نہیں ہوتے
mager kuch taqwiyat is zindagi ko gham bhi dete hain
ye oththi gerdanein werna ye lehjey kham nahin hote
جہاں میں کچھ بھی تو ممّتاز بے مقصد نہیں ہوتا
اگر مقصد نہیں ہوتا تو رشتے ضم نہیں ہوتے
jahan mein kuch bhi to Mumtaz bemaqsad nahin hota
ager maqsad nahin hota to rishte zam nahi hote
●●●
کلام: ممتازملک.پیرس 
مجموعہ کلام:
مدت ہوئی عورت ہوئے
 اشاعت:2011ء
●●● 
50% LikesVS
50% Dislikes

اپنا تبصرہ بھیجیں