(71) انجام/ شاعری ۔مدت ہوئی عورت ہوئے

[71] انجام
Anjam

بجلی کی کڑک کب تیرے جانے سے رکی تھی
طوفانِ بلا کب تیرے آنے سے تھما ہے
bijli ki karak kab tere jany se ruki thi
tufan e bala kab tere aane se thama hai
ہر وقت کی سختی اِنہیں باغی نہ بنا دے
گستاخ جواں سامنے تیرے جو تنا ہے
hr wqt ki sakhti inhein baghi na bana de
gustakh jawan samne tere jo tana hai
نرمی سے بزرگی کی عقیدت کا سبق دے
سمجھا اِسے بربادی ہی انجامِ انا ہے
nermi se bzurgi ki aqidat ka sabaq de
samjha ise berbadi hi anjam e ana hai
پھلدار درختوں کی روش کیا نہیں دیکھی
اکڑے ہوں شجر تو کبھی سایہ نہ گھنا ہے
phaldar darakhton ki rawish kia nahin deikhi
akre hon shajer to kbhi saya na ghana hai
ممّتاز میرے سامنے جو ٹوٹ کے بکھرا
آئینے کے ٹکڑوں پہ میرا عکس جما ہے
Mumtaz mere samne jo toth k bikhra
aainon k tokron pe mera aks jama hai
●●●
کلام: ممتازملک.پیرس 
مجموعہ کلام:
مدت ہوئی عورت ہوئے 
اشاعت:2011ء
●●● 
100% LikesVS
0% Dislikes

اپنا تبصرہ بھیجیں