(72)توفیق/ شاعری ۔ مدت ہوئی عورت ہوئے


[72] توفیق
Tofeeq

خدا جب روشنی کی آپ کو توفیق دیتا ہے
تو کالے راستے پھر خود بخود کترانے لگتے ہیں
khuda jab roshni ki ap ko tofeeq deta hai
to kale raste  phir khud bkhud katrane lagte hain
خدانخواستہ گر آپ سے توفیق کھو جاۓ
تو پھر سے آپ کو شیطان کچھ بہکانے لگتے ہیں
khuda na khasta ger ap se tofeeq kho jae
to phir se ap ko shaitan kuch behkane lagte hain 
ان کی پیروی کا کھیل بھی کیا طول لیتا ہے
کبھی پھر ہنسنے لگتے ہیں کبھی یہ گانے لگتے ہیں
on ki pairwi ka kheil bhi kia tool leita hai
kabhi phir hansne lagte hain kabhi ye gane lagte hain
بھلا کر اپنے پیارے رشتے اور انکی محبت کو
یہ کر کے جھوٹے وعدے ان کو پھر پھسلانے لگتے ہیں
bhula kr apne pyare rishte aur on ki mohabbat ko
ye kr ke jhote wade on ko phir phuslane lagte hain
مقامِ شرم آتا ہے تو پھر بلکل نہیں آتی
جہاں اس کا نہیں موقع وہاں شرمانے لگتے ہیں
maqam e sharm ata  hai to phir bilkul nahin ati
jahan is ka nahin moqa wahan shermane lagte hain
وہ جن کے عیب انکے بعد گننے سے نہیں فرصت
انہیں محفل میں دیکھیں تو گلے لپٹانے لگتے ہیں
wo jin k aib on k bad ginney se nahi foursat
onhain mehfil mein dekhein to gale liptane lagte hain
وہ سارے لوگ جو خود کو بڑا معصوم کہتے ہیں
مجھے ممّتاز نہ جانے وہ کیوں بیگانے لگتے ہیں
wo sare log jo khud ko bara masom kehte hain
mujhe Mumtaz na jane wo kyun beygane lagte hain
●●●
کلام: ممتازملک.پیرس 
مجموعہ کلام:
مدت ہوئی عورت ہوئے 
اشاعت:2011ء
●●● 
100% LikesVS
0% Dislikes

اپنا تبصرہ بھیجیں