(4) چار بیٹوں کی ماں/ نظم۔ میرے دل کا قلندر بولے

(4)  چار بیٹوں کی ماں 


  چار بیٹوں کی ماں تھی وہ 
 مقدروں والی   
  لوگوں کی نظر میں قسمت والی 
  اپنے منہ کا نوالہ بھی وہ                    انکے منہ میں رکھ دیتی تھی   
 اپنے سوٹ میں پیوند ٹانکے         
     انکے پینٹ تو اعلی ہو 
   چھید دوپٹے میں ہے تو کیا              شرٹ تو انکی اعلی ہو
    انکے باپ سے چھپ کر بھی وہ          مٹھائیاں پیسے اور کھلونے

اپنی بھوک کو دھوکہ دیکر        
      ان کی جیب میں بھر دیتی تھی
    یہ ہی سوچ بدل نہ پاتی     
         پاؤں میں ٹوٹی چپل کو وہ  
 کچھ دن اور چلے گی یہ تو              بچوں کو جاگر تو لے دو 
  اپنے گلے کا ہار بھی بیچا        
    ہاتھ کی چوڑی ناک کی لونگ
  اور ماتھے کا جھومر بیچا      
     شادی کی وہ ایک نشانی
   ہاتھ کی انگوٹھی بھی بیچی   
       تاکہ انکو گھر مل جاۓ 
  کرایہ داری میں پڑ نہ جائیں       
      دنیا کے دھکے نہ کھائیں   
 اپنے شوق نچھاور کر کے    
 اکدن  آئینہ جو دیکھا
   کالے بال سفید ہوۓ تھے     
      چہرے پر جھریوں کا جالا
   خود میں ہنستی بستی لڑکی   
      دور کہیں گم کر بیٹھی تھی
   یہاں تو کوئی اور ہی عورت   
     آئینے میں آن کھڑی تھی  
         ہڈیوں سے آوازیں آئیں  
              اب مجھ میں کچھ زور نہیں ہے  
 آنکھیں بھی شکوہ کر بیٹھیں   
   مجھ  میں بھی وہ نور نہیں ہے
   گھر میں بہوئیں  لے آئی تھی  
        بیٹے انکو سونپ چکی تھی 
 سوچا کہ کچھ دیر یہاں پر  
        بیٹے کے سنگ ہنس بولوں گی  
 انکے بچے   گود میں لیکر     
    پیار بھرے بوسے میں لونگی
     لیکن اک دن اسنے دیکھا   
      بند لفافے لیکر بیٹا
   دھیرے سے چلتے ہوۓ  اپنے 
     کمرے میں پہنچا تو اسکی
 بیوی نے در بھیڑ لیا          

کھانے کی خوشبو سے اس دن 
 ماں نے اپنا پیٹ بھرا
 اور
 اپنے ہی آنسو پی کر  
اسنے اپنی پیاس بجھائی  
 کیوں کہ اسکے دو لقمے تھے
 بھاری اس پر
  جسکو اسنے خون پلایا 
بس وہ رات ہی آخری ٹہری 
 روتی آنکھیں ساکت ہو گئیں 
   ماں کی میت چارپائی پر
 پڑی ہوئی ہے  
 بیٹے بہوؤں کے دامن میں 
    گھس کر ان  سے پوچھ رہے ہیں
   کفن کا خرچہ کون کریگا    
  گھر  بانٹا گہنے بانٹے اور 
ساری  زمینیں بانٹیں 

 یارو   ایسا کرو کہ مل کے
  چاروں  کفن پہ چندا کر لو  
 اللہ بھی خوش ہو جاۓ گا  
 تو کتنی خوش قسمت ہے ماں 
 تیری خاطر 
ہم کو گھر سے باہر جا کر  
  چندہ مانگنا نہیں پڑے گا   
کیونکہ تُو بیٹوں کی ماں تھی    
 بیٹوں کی ماؤں کا کفن تو 
   اکثر چندے کا ہوتا ہے
●●●
کلام:مُمتاز ملک 
مجموعہ کلام:
 میرے دل کا قلندر بولے
اشاعت: 2014ء
 ●●●
100% LikesVS
0% Dislikes

اپنا تبصرہ بھیجیں