(12) آو نہ کچھ خواب بنیں/ نظم۔ میرے دل کا قلندر بولے

(12) آو نہ کچھ خواب بنیں 

آؤ نہ کچھ خواب بُنیں
اچھی سی آواز سنیں
aao na koch khab bonein
achchi c awaz sonein
منزل کا رستہ بتلائے
اُس دھرتی پر پاؤں دھریں
manzil ka rasta batlay
os dharti pr paon dhrein

مرضی کا اِک راگ الاپیں  
اُس پر اپنے سر کو دُھنیں
merzi ka ik rag alapein
os pr apny sr ko dhonein

بادل کا ہم فرش بنائیں
بُوندوں کی سرگم کو سُنیں
badal ka hum farsh banaein
bondon ki sergum ko sonein

چاند سے تھوڑی ٹھنڈک لوں
سورج سے تھوڑی گرمی لیں
chand sy thori thandak loon
soraj sy thori germi lein

تاروں کا ملبوس بنا کر
پھولوں کی چپّل پہنیں
taron ka malbos bana kr
pholoon ki chappal pehnein

ہوا کے سنگ میں کِکلی ڈالیں
اور پرندے کھو کھو کھیلیں
hawa k sang mein kikli dalein
aur parindy kho kho kheilein

آؤ نہ کچھ خواب بُنیں
اچھی سی آواز سنیں
aao na koch khab bonein
achchi c awaz sonein
●●●
کلام:مُمتاز ملک
مجموعہ کلام:
 میرے دل کا قلندر بولے
اشاعت:
2014ء
   ●●●
100% LikesVS
0% Dislikes

اپنا تبصرہ بھیجیں