(30) رحمت/ نظم۔ میرے دل کا قلندر بولے

(30) رحمت

مجھے رحمت بنا کر اس جہاں میں 
    ہزاروں رنگ دیکر تھا اتارا  

 میرے چاروں طرف 
  رشتوں کا اور عزت کو گھیرا

 بنا کر آنکھ کاروشن ستارہ             
  میرے رب نے بڑے ہی چاؤ سے تھا
 مجھے دلکش جہاں میں لا اتارا            
   مگر یکدم یہ کیا سے کیا ہوا ہے 
 کہ بابا جان کا دشمن              
         تو بھائی  
 اک لٹیرا بن گیا ہے

  بتاؤ مجھ کو میرا گھر کہاں ہے  
   پناہ مل جاۓ مجھکو  
 وہ ایسا در کہاں ہے     
  یہاں جو چاہے
 لیکر ہاتھ میں تیزاب کی بوتل  
 عطا کردہ خدا کے حسن کو 
برباد کر دے  
  میں جب انکار کر دوں
 نفس کے شیطان کو تو 
  وہ مجھ کو جس طرح چاہے
  سڑک پر لا کے پٹخے  
 اور پھر بے حال کر دے 
  خدایا ظلم کی یہ 
  کیسی آندھی چل پڑی ہے
  میری عزت کے رکھوالے  
 میرے ہی دام لگواتے
 نظر آنے لگے ہیں 
   تو گویا 
   حشر ہے اب ایک اک دن  
    جو گزرتا جا رہا ہے  
 کلیجہ میرا اب کرنے کو چھلنی  
 نظر کے سامنے    
 خنجر کو دھارا جا رہا ہے 
 مجھے اس ظلم کے مقتل میں لوگو 
  ہنس ہنس کر پکارا جا رہا ہے۔۔۔                  
●●●
کلام: ممتازملک 
مجموعہ کلام: 
میرے دل کا قلندر بولے 
اشاعت: 2014ء
       ●●●        
100% LikesVS
0% Dislikes

اپنا تبصرہ بھیجیں