کشید کر/ شاعری

               کشید کر         

    (کلام: ممتازملک.پیرس)

❤راتوں سے وحشتوں کے وہ لمحے                                             کشید کر

خوابوں کے رکھ دیئے تھے جہاں سر                                              برید کر


 ?سونے کے واسطے زرا  آنکھیں تو                                              موندیئے

ہم نے اڑا دیئے ہیں سبھی غم خرید کر


? دنیا بدل رہی ہے میرے اے دروغ گو     

 جدت پسند بن  تو  بہانے جدید کر 


? سامان قہررب ہے بپاجو نہ پوچھیئے 

  رشتے گزر رہے ہیں یوں دامن درید کر


?رفتار سست ہے تیری گفتار تیز ہے

دعووں میں کچھ عمل کااضافہ مذید کر


?اپنے پروں پہ کر کے بھروسہ تو                                                  دیکھتے

 اونچی اڑان کے لیئے محنت شدید کر


?دیوانے سے نہ ہوش کی امید کیجیئے       

    بندہ ہے  گناہگار  اسے  بر گزید کر


?برسوں سے سن رہے ہیں یہ احوال                                              درد کے 

ممتاز اب خوشی کی بھی آ کر نوید کر     

●●●

100% LikesVS
0% Dislikes

اپنا تبصرہ بھیجیں