(28) اظہار/ شاعری۔مدت ہوئی عورت ہوئے

[28]  
اِظہار
EZHAR

اِس دل کا دردمیرےلفظوں میں چھا گیا
is dl ka dard mere lafzoon mein chaa gaya
لفظوں سے پھر قلم کی روانی میں آگیا
lafzoon se phir qalum ki rawani mein aa gaya

اُس کو لگا زمانے کا چرکہ ہے دوستو
os ko laga zamane ka cherka hai dosto
اِظہار سارا شعلہ بیانی میں آگیا
ezhar sara shola bayani mein aa gaya

ہم نے تو لاکھ چاہا کہ غم مسکرا اُٹھیں
hum ne to lakh chaha k gham muskora othein
یہ کیا کہ درد آنکھ کے پانی میں آگیا 
ye kia k dard aankh k pani mein aa gaya

پھولوں میں بھی پسند بدلتے ہیں بے دھڑک
pholoon mein bhi pasand badalte hain be dhrrak
کل موتیا اب رات کی رانی میں آگیا
kl motia ab raat ki rani mein aa gaya

ہر رنگ کے تھے تیِر میری داستان میں
hr rang k they teer meri dastan mein
اب ایک رنگ اور کہانی میں آگیا
ab aik rang aur kahani mein aa gaya

ممّتاز ذمّہ داریوں کے بوجھ کے نیچے
Mumtaz zimmadarion k bojh k neeche
کیسا بڑھاپا اُس کی جوانی میں آگیا
kaisa borrhapa os ki jawani mein aa gaya
●●●
کلام: ممتازملک 
:مجموعہ کلام
مدت ہوئی عورت ہوئے
اشاعت: 2011ء
●●●




100% LikesVS
0% Dislikes

اپنا تبصرہ بھیجیں