(1) میں اور تو/ حمد۔شاعری ۔ مدت ہوئی عورت ہوئے

(1) میں اور تو 
حمد باری تعالی 

کہاں وہ وقت تھا کہ قرب میں قریب نہ تھا
kahan wo wqt tha k qurb mein qreeb na tha
کہاں یہ حال کہ ہر دم تیرے خیال میں ہوں
kahan ye haal k hr dum tere khayal mein hoon 


زباں سے کرتا ہوں تیری وفا کا عہد مگر
zuban se krta hoon teri wafa ka ehd mgr
میں دل سے آج بھی شامل کسی وبال میں ہوں
main dl se aaj bhi shamil kisi wabal mein hoon 


کسی کے واسطے چاہوں تجھے رِیا میں کروں
kisi k wastey chahoon tujhe ria main karoon
تیرے لیئے تجھے چاہوں اِسی کمال میں ہوں
tere liey tujhey chahoon isi kmal mein hoon 


ہزاروں خواہشیں پل پل تُو میری پوری کرے
hazaroon khahishain pal pal tu meri puri kare
میں تیری ایک ہی خواہش پہ سو سوال میں ہوں
main teri aik hi khahish pe so swal mein hoon 


تجھے میں سوچتا رہ جاؤں اور کھویا ہوا
tujhey main sochta reh jaoon or khoya howa
میری ہی روح سے اِک رشتہِ بحال میں ہوں
meri hi rooh se ik rishta e bahal mein hoon 


وفا کی راہ میں اِک بار بڑھ چلیں جو قدم
wafa ki rah mein ik bar barrh chalain jo qadam
حیات کرنے شیاطین کی اُبال میں ہوں
hyat krne shayateen ki obal mein hoon 


جو موت مجھ کو تیرے عشق میں نصیب ہوئ
jo mout mujh ko tere ishq mein naseeb hooi
نہیں ہے ہجر یہ ممّتاز اِک وِصال میں ہوں
●●●
 کلام/ ممتازملک
مجموعہ کلام/
     مدت ہوئی عورت ہوئے
   اشاعت:(2011ء)
●●●
100% LikesVS
0% Dislikes

اپنا تبصرہ بھیجیں