(11) گھروندے/ شاعری ۔مدت ہوئی عورت ہوئے


 [11]گھروندے
GHAROONDEY
 
 مٹّی کے گھروندوں پہ بڑا ظلم ہوا ہے
پھر آج کوئی اِن پہ پاؤں رکھ کے گیا ہے
mitti k ghrondoon pe bara zulm howa hai
phir aaj koi in pe paon rakh k gya hai 

معصوم پرندوں کےبھی مسکن نہ بچے ہیں
یہ ہاتھ تنے پر بڑا بھرپور پڑا ہے 
masoom prindon k bhi msken na bachy hain
yeh hath tne per bara bha rpoor para hai 

برباد جسے کر دیا اِک وار میں آکر
اُس گھر کو بنانے میں بڑا وقت لگا ہے
berbad jise kr dia ik war mein aa kr
os ghr ko banane mein bara wqt laga hai

محتاج کبھی کوئی کسی کا نہیں ہوتا
جب تک نہ نصیبوں میں کڑا وقت لکھا ہے 
mohtaaj kabhi koi kisi ka nahin hota
jab tak na naseeboon mein kara wqt likha hai 

وہ درد کی شدّت سے واقف نہیں ہو گا کیا
خود اپنے ہی ہاتھوں سے اپنا زخم سیا ہے 
wo drd ki shiddat se waqif nahi ho ga kia
khud apne hi hathoon se apna zakhm sia hai 

سنگباری کی کیسے میں اِجازت تمہیں دیدوں
دو پتھروں کے بیچ میرا دل جو دبا ہے 
sangbari ki kaise main ijazat tumhain de doon
do patharoon k beech mera dil jo daba hai 
میں کیسی سزاؤں کی سزاوار ہوئی ہوں
خنجر بھی میرا ہاتھ میرا قتل میرا ہے 
main kaisi sazaoon ka sazawar hoi hoon
khanjer bhi mera hath mera qatl mera hai 

ممّتاز قدم سوچ کے رکھنا تُو زمیں پر
ٹکڑے ہوا ہر سمت میرا جسم پڑا ہے 
Mumtaz qadam sooch k rakhna tu zameen pr
Tokrre howa hr samt mera jism parra hai 
●●●
کلام: ممتازملک 
مجموعہ کلام:
مدت ہوئی عورت ہوئے 
اشاعت: 2011ء
●●●
100% LikesVS
0% Dislikes

اپنا تبصرہ بھیجیں