(36) کاجل/ شاعری۔ مدت ہوئی عورت ہوئے

(36)  کاجل
KAJAL

اِنسان زمانے میں بھلا کیا نہیں سہتا 
حالات کا دریا کبھی اِک رُخ نہیں بہتا
insan zamane mein bhala kia nahi sehta
halat ka derya kbhi ik rukh nahi behta 

اپنا ہی جگر خون کیئے جاتا ہوں ہر دم
پھر بھی تُو سمجھتا ہے کہ میں کچھ نہیں کہتا
apna hi jiger khoon kiye jata hoon hr dum
phir bhi to samajhta hai k main kuch nahi kehta

کچھ دیر کا صدمہ ہے کچھ دیر کا غم ہے
اب دل میں میرے کوئی مسلسل نہیں رہتا
kuch dair ka sadma hai kuch dair ka gham hai
ab dl mein mere koi mosalsal nahi rehta

کوئ بھی جدا ہو یہ ہمیں یاد ہے رکھنا
کاجل بھی سدا آنکھ کے گھر میں نہیں رہتا
koi bhi juda ho ye hamein yad hai rakhna
kajal bhi sada aankh k ghar mein nahi rehta

چٹکی ہوئ کلیاں ہوں کھلتے ہوۓ گُل ہوں
موسم کے بدلنے کو ہر ایک ہے سہتا
chatki hoi kalyan hoon khilte hoey gul hoon
mosam k badalne ko hr aik hai sehta 

ممّتاز بتایا ہے یہ صدیوں نے گھڑی کو
جو آنکھ جھپک جاۓ وہ ہی پل نہیں رہتا
Mumtaz bataya hai ye sadyon ne ghari ko
jo aankh jhapak jaey wohi pal nahi rahta

●●●
کلام : ممتازملک
مجموعہ کلام :
 مدت ہوئی عورت ہوئے
اشاعت:2011ء
●●●
100% LikesVS
0% Dislikes

اپنا تبصرہ بھیجیں