(5) ماں/ شاعری ۔ مدت ہوئی عورت ہوئے

[5]
  ماں
MAAN 

ماؤں کو کسی شان شوکت سے غرض کیا
maaun ko kisi shan se shoket 
se gharaz kia
جو رہ سکے اولاد بس اولاد بہت ہے
jo reh sake aulad bus aulad 
bohot hai

جو اُسنے تیری ذات پر احسان کیئے ہیں
jo os ne teri zaat pe ehsaan kiye hain 
ہزارواں حصہ ہو تجھے یاد بہت ہے
hazarwan hissa ho tujhe yaad bohot hai 

دامانِ دعا جب کبھی پھیلائے خدا سے
damaan e doaa jab kabhi phelae Khuda se 
بخشش کے لیئے اُسکے ہو فریاد بہت ہے
bakhshish k liey os k ho feryad bohot hai 

ہر بار تھکن مجھ کو پریشان جو کر دے
hr baar thaken mujh ko parishan jo kr de
بالوں میں میرے پھرتا تیرا ہاتھ بہت ہے
baloon mein mere phirta tera hath bohot hai 

سینے سے لگا کر تُو میرے گال جو تھپکے
seene se laga kr tu mere gaal jo thapke
وہ لمس وہ احساس تیرے بعد بہت ہے
wo lms wo ehsas tere baad bohot hai 

تکلیف میری ہوتی بدلتے تیرے تیور
takleef meri hoti badalte tere tewer 
ہو جاتا سکوں تیرا بھی برباد بہت ہے
ho jata sokoon tera bhi berbaad bohot hai 

ممّتاز کڑے دور سے گزرے مگر اب تک
Mumtaz kare dore se guzre mger ab tak 
میں تیری دعاؤں سے ہوں آباد بہت ھے
main teri doaaon se hoon aabad bohot hai
●●●
کلام: ممتازملک 
مجموعہ کلام:
مدت ہوئی عورت ہوئے 
اشاعت: 2011ء
●●●


50% LikesVS
50% Dislikes

اپنا تبصرہ بھیجیں