(17) حسب آرزو/ شاعری ۔ مدت ہوئی عورت ہوئے

[17] حسبِ آرزو
HASB E AARZO
 
جہاں میں کچھ بھی کبھی حسبِ آرزو نہ ہُوا
jahan mein koch bhi kabhi hasb e aarzo na howa
کسی کا میں نہ ہوا اور کسی کا تُو نہ ہُوا
ksi ka mein na howa aur ksi ka tu na howa

تمام راستے منزل کو میری جاتے تھے 
tmam raste manzil ko meri jate they
میرے مزاج میں آسانیاں کا خُو نہ ہُوا
mere mizaj mein asanion ka khoo na howa

اُلجھ اُلجھ کے گرے ہیں ہزار بار مگر
olajh olajh k gire hain hzar bar mger
یہ شُکر سُلجھنوں میں دل میرا لہو نہ ہُوا
ye shukr suljhanoon mein dl 
mera laho na howa

بہت سے چہرے کبھی ایک جیسے لگتے ہیں
bohot se chehre kbhi aik jeise lagte hain
مگر یہ یاد رکھو کوئی ہُو بہو نہ ہُوا
mgr ye yad rakhoo koi hoo bahoo na howa

وہ ہاتھ جن کی دعائیں قبول ہو نہ سکیں
wo hath jn ki duaein qubool ho na skein
کبھی ہُوا کہ وہ پھر محوِ جستجو نہ ہُوا
kbhi howa k wo phir mehw e justajo na howa

لہر نے دی ہوں جنہیں لوریاں تھپیڑوں کی
leher ne di hoon jinhin lorian thapirron ki
بھلا وہ شخص بھی ممّتاز تُند خُو نہ ہُوا
bhala wo shakhs bhi MMumtaz  tund khoo na howa 
●●●
کلام: ممّتاز ملک 
:مجموعہ کلام
مدت ہوئی عورت ہوئے             
اشاعت:ء2011                  
●●●    
100% LikesVS
0% Dislikes

اپنا تبصرہ بھیجیں